aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ایسا وہ بے شمار و قطار انتظار تھا

ظفر اقبال

ایسا وہ بے شمار و قطار انتظار تھا

ظفر اقبال

MORE BYظفر اقبال

    ایسا وہ بے شمار و قطار انتظار تھا

    پہلی ہی بار دوسری بار انتظار تھا

    خاموشیٔ خزاں تھی چمن در چمن تمام

    شاخ و شجر میں شور بہار انتظار تھا

    دیکھا تو خلوت خس‌ و خاشاک خواب میں

    روشن کوئی چراغ شرار انتظار تھا

    باہر بھی گرد امید کی اڑتی تھی دور دور

    اندر بھی چاروں سمت غبار انتظار تھا

    پھیلے ہوئے وہ گھاس کے تختے نہ تھے وہاں

    دراصل ایک سلسلہ وار انتظار تھا

    کوئی خبر تھی آمد و امکان صبح کی

    اور اس کے ارد گرد حصار انتظار تھا

    کس کے گمان میں تھے نئے موسموں کے رنگ

    کس کا مرے سوا سروکار انتظار تھا

    امڈا ہوا ہجوم تماشا تھا دائیں بائیں

    تنہا تھیں آنکھیں اور ہزار انتظار تھا

    چکر تھے پاؤں میں کوئی شام و سحر ظفرؔ

    اوپر سے میرے سر پہ سوار انتظار تھا

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے