عیش ہی عیش ہے نہ سب غم ہے

علی جواد زیدی

عیش ہی عیش ہے نہ سب غم ہے

علی جواد زیدی

MORE BYعلی جواد زیدی

    عیش ہی عیش ہے نہ سب غم ہے

    زندگی اک حسین سنگم ہے

    جام میں ہے جو مشعل گل رنگ

    تیری آنکھوں کا عکس مبہم ہے

    اے غم دہر کے گرفتارو

    عیش بھی سرنوشت آدم ہے

    نوک مژگاں پہ یاد کا آنسو

    موسم گل کی سرد شبنم ہے

    درد دل میں کمی ہوئی ہے کہیں

    تم نے پوچھا تو کہہ دیا کم ہے

    مٹتی جاتی ہے بنتی جاتی ہے

    زندگی کا عجیب عالم ہے

    اک ذرا مسکرا کے بھی دیکھیں

    غم تو یہ روز روز کا غم ہے

    پوچھنے والے شکریہ تیرا

    درد تو اب بھی ہے مگر کم ہے

    کہہ رہا تھا میں اپنا افسانہ

    کیوں ترا دامن مژہ نم ہے

    غم کی تاریکیوں میں اے زیدیؔ

    روشنی وہ بھی ہے جو مدھم ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    عیش ہی عیش ہے نہ سب غم ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY