عیش سب خوش آتے ہیں جب تلک جوانی ہے

تاباں عبد الحی

عیش سب خوش آتے ہیں جب تلک جوانی ہے

تاباں عبد الحی

MORE BYتاباں عبد الحی

    عیش سب خوش آتے ہیں جب تلک جوانی ہے

    مردہ دل وہ ہوتا ہے جو کہ شیح فانی ہے

    جب تلک رہے جیتا چاہئے ہنسے بولے

    آدمی کو چپ رہنا موت کی نشانی ہے

    جو کہ تیرا عاشق ہے اس کا اے گل رعنا

    رنگ زعفرانی ہے اشک ارغوانی ہے

    آہ کی نہیں طاقت تاب نہیں ہے نالے کی

    ہجر میں ترے ظالم کیا ہی ناتوانی ہے

    چار دن کی عشرت پر دل لگا نہ دنیا سے

    کہتے ہیں کہ جنت میں عیش جاودانی ہے

    گل رخاں کا آب و رنگ دیکھنے سے میرے ہے

    حسن کی گلستاں کی مجھ کو باغبانی ہے

    دل سے کیوں نہیں چاہوں یار کو کہ اے تاباںؔ

    دل ربا ہے پیارا ہے جیوڑا ہے جانی ہے

    مأخذ :
    • Deewan-e-Taban Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY