ایسی نیند آئی کہ پھر موت کو پیار آ ہی گیا

شفیق جونپوری

ایسی نیند آئی کہ پھر موت کو پیار آ ہی گیا

شفیق جونپوری

MORE BYشفیق جونپوری

    ایسی نیند آئی کہ پھر موت کو پیار آ ہی گیا

    رات بھر جاگنے والے کو قرار آ ہی گیا

    خاک میں یوں نہ ملانا تھا مری جاں تم کو

    اک وفادار کے دل میں بھی غبار آ ہی گیا

    یاد گیسو نے تسلی تو بہت دی لیکن

    سامنے رات مآل دل زار آ ہی گیا

    کشتۂ ناز کی میت پہ نہ آنے والا

    پھول دامن میں لیے سوئے مزار آ ہی گیا

    یہ بیاباں یہ شب ماہ یہ خنکی یہ ہوا

    اے خزاں تجھ کو بھی انداز بہار آ ہی گیا

    آفریں اشک ندامت کی درخشانی کو

    اک سیہ کار کے چہرے پہ نکھار آ ہی گیا

    بعد منزل بھی نہ محسوس ہوا مجھ کو شفیقؔ

    مرحبا صل علیٰ کوچۂ یار آ ہی گیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ایسی نیند آئی کہ پھر موت کو پیار آ ہی گیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY