عجب ہیں ہم یہ کس کی سعئ لا حاصل پہ روتے ہیں

پیرزادہ قاسم

عجب ہیں ہم یہ کس کی سعئ لا حاصل پہ روتے ہیں

پیرزادہ قاسم

MORE BYپیرزادہ قاسم

    عجب ہیں ہم یہ کس کی سعئ لا حاصل پہ روتے ہیں

    ابھی زندہ ہیں اور ناکامیٔ قاتل پہ روتے ہیں

    ہمیں رہ رہ کے طوفاں کی رفاقت یاد آتی ہے

    ہیں اب آسودۂ ساحل کھڑے ساحل پہ روتے ہیں

    بہت ہم کو رلایا ماضی و امروز نے سو اب

    نشاط گریہ ایسا ہے کہ مستقبل پہ روتے ہیں

    گروہ عاشقاں تھا شہر گریہ ان کی منزل تھی

    یہ رستے بھر بھی روتے آئے اب منزل پہ روتے ہیں

    کہاں روتے ہیں ہم آغاز تنسیخ تعلق پر

    جو کھینچی جا چکی ہے اس حد فاصل پہ روتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY