عجب رنگ آنکھوں میں آنے لگے

آشفتہ چنگیزی

عجب رنگ آنکھوں میں آنے لگے

آشفتہ چنگیزی

MORE BYآشفتہ چنگیزی

    عجب رنگ آنکھوں میں آنے لگے

    ہمیں راستے پھر بلانے لگے

    اک افواہ گردش میں ہے ان دنوں

    کہ دریا کناروں کو کھانے لگے

    یہ کیا یک بہ یک ہو گیا قصہ گو

    ہمیں آپ بیتی سنانے لگے

    شگن دیکھیں اب کے نکلتا ہے کیا

    وہ پھر خواب میں بڑبڑانے لگے

    ہر اک شخص رونے لگا پھوٹ کے

    کہ آشفتہؔ جی بھی ٹھکانے لگے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    عجب رنگ آنکھوں میں آنے لگے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY