عجیب دور ہے اہل ہنر نہیں آتے

ماہر عبدالحی

عجیب دور ہے اہل ہنر نہیں آتے

ماہر عبدالحی

MORE BYماہر عبدالحی

    عجیب دور ہے اہل ہنر نہیں آتے

    پدر کا علم لئے اب پسر نہیں آتے

    ہوا کے جھونکے بھی لے کر خبر نہیں آتے

    جو گھر سے جاتے ہیں پھر لوٹ کر نہیں آتے

    ہزار شاخ تمنا کی دیکھ بھال کرو

    یہ شاخ وہ ہے کہ جس پر ثمر نہیں آتے

    سمجھ سکیں گے نہ میری گزر بسر کو حضور

    سنہرے تخت سے جب تک اتر نہیں آتے

    ہم ان کی سمت چلیں کس طرح سے میلوں میل

    ہماری سمت جو بالشت بھر نہیں آتے

    جناب شیخ کے حجرے سے دور ہی رہئے

    فرشتے آتے ہیں اس میں بشر نہیں آتے

    سوال ہی نہ تھا دشمن کی فتح یابی کا

    ہماری صف میں منافق اگر نہیں آتے

    نہ جانے کس کی نظر لگ گئی زمانے کو

    کہ پھول چہرے شگفتہ نظر نہیں آتے

    وہ دن گئے کہ کوئی خواب ہم کو تڑپائے

    اب ایسے خواب ہمیں رات بھر نہیں آتے

    ہم ان کی راہ میں آنکھیں بچھائیں کیوں ماہرؔ

    جو آسماں سے سر رہ گزر نہیں آتے

    مآخذ
    • کتاب : Hari Sonahri Khak (Ghazal) (Pg. 145)
    • Author : Mahir Abdul Hayee
    • مطبع : Bazme-e-Urdu,Mau (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY