عجیب خوف ہے جذبوں کی بے لباسی کا

شہناز نبی

عجیب خوف ہے جذبوں کی بے لباسی کا

شہناز نبی

MORE BY شہناز نبی

    عجیب خوف ہے جذبوں کی بے لباسی کا

    جواز پیش کروں کیا میں اس اداسی کا

    یہ دکھ ضروری ہے رشتے خلا پذیر ہوئے

    ادا ہوا ہے مگر قرض خود شناسی کا

    نہ خواب اور نہ خوف شکست خواب رہا

    سبب یہی ہے نگاہوں کی بے ہراسی کا

    کوئی ہے اپنے سوا بھی مسافت شب میں

    سحر جو ہو تو کھلے راز خوش قیاسی کا

    وہ سیل اشک سمٹنے لگا ہے شعروں میں

    جسے ملا نہ کوئی راستہ نکاسی کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY