عجیب سانحہ گزرا ہے ان گھروں پہ کوئی

جاوید انور

عجیب سانحہ گزرا ہے ان گھروں پہ کوئی

جاوید انور

MORE BYجاوید انور

    عجیب سانحہ گزرا ہے ان گھروں پہ کوئی

    کہ چونکتا ہی نہیں اب تو دستکوں پہ کوئی

    اجاڑ شہر کے رستے جو اب سناتے ہیں

    یقین کرتا ہے کب ان کہانیوں پہ کوئی

    ہے بات دور کی منزل کا سوچنا اب تو

    کہ رستہ کھلتا نہیں ہے مسافروں پہ کوئی

    وہ خوف ہے کہ بدن پتھروں میں ڈھلنے لگے

    عجب گھڑی کہ دعا بھی نہیں لبوں پہ کوئی

    ہوا بھی تیز نہ تھی جب پرندہ آ کے گرا

    نہیں تھا زخم بھی جاویدؔ ان پروں پہ کوئی

    مأخذ :
    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 395)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23)
    • اشاعت : Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY