عکس ہر روز کسی غم کا پڑا کرتا ہے

بشر نواز

عکس ہر روز کسی غم کا پڑا کرتا ہے

بشر نواز

MORE BY بشر نواز

    عکس ہر روز کسی غم کا پڑا کرتا ہے

    دل وہ آئینہ کہ چپ چاپ تکا کرتا ہے

    بہتے پانی کی طرح درد کی بھی شکل نہیں

    جب بھی ملتا ہے نیا روپ ہوا کرتا ہے

    میں تو بہروپ ہوں اس کا جو ہے میرے اندر

    وہ کوئی اور ہے جو مجھ میں جیا کرتا ہے

    رنگ سا روز بکھر جاتا ہے دیواروں پر

    کچھ دیئے جیسا دریچے میں جلا کرتا ہے

    جانے وہ کون ہے جو رات کے سناٹے میں

    کبھی روتا ہے کبھی خود پہ ہنسا کرتا ہے

    روز راہوں سے گزرتا ہے صداؤں کا جلوس

    دل کا سناٹا مگر روز بڑھا کرتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY