اپنے عہد وفا کو بھول گئے

مضطر خیرآبادی

اپنے عہد وفا کو بھول گئے

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    اپنے عہد وفا کو بھول گئے

    تم تو بالکل خدا کو بھول گئے

    کچھ نہ پوچھ انتہائے‌ رنج فراق

    درد پا کر دوا کو بھول گئے

    ہم نے یاد بتاں میں دم توڑا

    مرتے مرتے خدا کو بھول گئے

    ان کی باتوں کو یاد کرتا ہوں

    جو مری التجا کو بھول گئے

    درمیانی تعلقات نہ پوچھ

    ابتدا انتہا کو بھول گئے

    ان سے دو دن بھی چاہ نبھ نہ سکی

    مضطرؔ بے نوا کو بھول گئے

    مأخذ :
    • کتاب : Khirman (Part-1) (Pg. 97)
    • Author : Muztar Khairabadi
    • مطبع : Javed Akhtar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY