اپنے دل کی کھوج میں کھو گئے کیا کیا لوگ

مجید امجد

اپنے دل کی کھوج میں کھو گئے کیا کیا لوگ

مجید امجد

MORE BY مجید امجد

    اپنے دل کی کھوج میں کھو گئے کیا کیا لوگ

    آنسو تپتی ریت میں بو گئے کیا کیا لوگ

    کرنوں کے طوفان سے بجرے بھر بھر کر

    روشنیاں اس گھاٹ پر ڈھو گئے کیا کیا لوگ

    سانجھ سمے اس کنج میں زندگیوں کی اوٹ

    بج گئی کیا کیا بانسری رو گئے کیا کیا لوگ

    میلی چادر تان کر اس چوکھٹ کے دوار

    صدیوں کے کہرام میں سو گئے کیا کیا لوگ

    گٹھڑی کال رین کی سونٹی سے لٹکائے

    اپنی دھن میں دھیان نگر کو گئے کیا کیا لوگ

    میٹھے میٹھے بول میں دوہے کا ہنڈول

    سن سن اس کو بانورے ہو گئے کیا کیا لوگ

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyaat-e-majiid Amjad (Pg. 350)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY