اپنے ہونے سے بھی انکار کئے جاتے ہیں

جلیل عالیؔ

اپنے ہونے سے بھی انکار کئے جاتے ہیں

جلیل عالیؔ

MORE BYجلیل عالیؔ

    اپنے ہونے سے بھی انکار کئے جاتے ہیں

    ہم کہ رستہ ترا ہموار کئے جاتے ہیں

    روز اب شہر میں سجتے ہیں تجارت میلے

    لوگ صحنوں کو بھی بازار کئے جاتے ہیں

    ڈالتے ہیں وہ جو کشکول میں سانسیں گن کر

    کل کے سپنے بھی گرفتار کئے جاتے ہیں

    کس کو معلوم یہاں اصل کہانی ہم تو

    درمیاں کا کوئی کردار کئے جاتے ہیں

    دل پہ کچھ اور گزرتی ہے مگر کیا کیجے

    لفظ کچھ اور ہی اظہار کئے جاتے ہیں

    میرے دشمن کو ضرورت نہیں کچھ کرنے کی

    اس سے اچھا تو مرے یار کئے جاتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY