اپنے محور سے جب اتر جاؤں

رضی رضی الدین

اپنے محور سے جب اتر جاؤں

رضی رضی الدین

MORE BYرضی رضی الدین

    اپنے محور سے جب اتر جاؤں

    پھول کی طرح پھر بکھر جاؤں

    لوٹ پھر آؤں کیسے محور پر

    کوئی بتلاؤ کیا میں کر جاؤں

    جانے کیا کہہ رہی ہے دنیا اب

    پہلے کہتی تھی کیوں نہ مر جاؤں

    مجھ سے ہرگز سے نہ ہو سکے گا کبھی

    خود کو اوروں کے جیسا کر جاؤں

    ڈوب جاؤں بھنور کے ساتھ کہیں

    لہر کے ساتھ پھر ابھر جاؤں

    لوٹ آیا تو ہوں میں محور پر

    اب یہ خواہش ہے پھر بکھر جاؤں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے