اپنی آنکھوں پر وہ نیندوں کی ردا اوڑھے ہوئے

شارب مورانوی

اپنی آنکھوں پر وہ نیندوں کی ردا اوڑھے ہوئے

شارب مورانوی

MORE BYشارب مورانوی

    اپنی آنکھوں پر وہ نیندوں کی ردا اوڑھے ہوئے

    سو رہا ہے خواب کا اک سلسلہ اوڑھے ہوئے

    سردیوں کی رات میں وہ بے مکاں مفلس بشر

    کس طرح رہتا ہے اکلوتی ردا اوڑھے ہوئے

    اک عجب انداز سے آئی لحد پر اک دلہن

    چوڑیاں توڑے ہوئے دست حنا اوڑھے ہوئے

    خیر مقدم کے لئے بڑھنے لگیں میری طرف

    منزلیں اپنے سروں پر راستہ اوڑھے ہوئے

    پیڑ کے نیچے ذرا سی چھاؤں جو اس کو ملی

    سو گیا مزدور تن پر بوریا اوڑھے ہوئے

    تیری یادوں کے چراغوں نے کیا جھک کر سلام

    جب چلی آندھی کوئی زور ہوا اوڑھے ہوئے

    بھیڑ میں گم ہو گیا اک روز شاربؔ کا وجود

    ڈھونڈھتا ہے جسم پر اپنا پتا اوڑھے ہوئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY