اپنی بہار پہ ہنسنے والو کتنے چمن خاشاک ہوئے

اختر انصاری

اپنی بہار پہ ہنسنے والو کتنے چمن خاشاک ہوئے

اختر انصاری

MORE BY اختر انصاری

    اپنی بہار پہ ہنسنے والو کتنے چمن خاشاک ہوئے

    اپنے رفو کو گننے والو کتنے گریباں چاک ہوئے

    دیوانوں کو کون بتائے آج کی رسم اور آج کی بات

    اس نے انہیں کی سمت نظر کی عشق میں جو بے باک ہوئے

    شعبدۂ یک طرز کرم ہے کیسی سزا اور کیسی جزا

    موج تبسم جب لہرائی تر دامن بھی پاک ہوئے

    رخ دیکھا جس سمت ہوا کا اس جانب منہ کر کے چلے

    دشت جنوں کے دیوانے بھی مثل صبا چالاک ہوئے

    خاک نشیمن جب اڑتی ہے دل سے دھواں سا اٹھتا ہے

    حادثے اس گلزار میں ورنہ اور بہت غم ناک ہوئے

    دیکھتے دیکھتے دنیا بدلی گلشن کیا ویرانہ کیا

    پربت پربت نقش تھے جن کے مٹتے مٹتے خاک ہوئے

    جان چمن جو گل تھے اخترؔ وہ تو ہوئے معتوب و ذلیل

    زیب گلستاں رونق گلشن کل کے خس و خاشاک ہوئے

    مآخذ:

    • کتاب : auraq salnama magazines (Pg. 499)
    • Author : Wazir Agha,Arif Abdul Mateen
    • مطبع : Daftar Mahnama Auraq Lahore ( 1967 )
    • اشاعت : 1967

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY