اپنی جاں بازی کا جس دم امتحاں ہو جائے گا

امداد امام اثرؔ

اپنی جاں بازی کا جس دم امتحاں ہو جائے گا

امداد امام اثرؔ

MORE BYامداد امام اثرؔ

    اپنی جاں بازی کا جس دم امتحاں ہو جائے گا

    خنجر سفاک پر جوہر عیاں ہو جائے گا

    آہ سوزاں کا اگر اونچا دھواں ہو جائے گا

    آسماں اک اور زیر آسماں ہو جائے گا

    کچھ سمجھ کر اس مۂ خوبی سے کی تھی دوستی

    یہ نہ سمجھے تھے کہ دشمن آسماں ہو جائے گا

    لے خبر بیمار غم کی ورنہ اے رشک مسیح

    تیری فرقت میں فراق جسم و جاں ہو جائے گا

    خاک کر دے گا مجھے آخر سیہ چشموں کا عشق

    جسم خاکی گرد پائے آہواں ہو جائے گا

    جب ادا سے وہ کرے گا قتل مجھ کو اے اثرؔ

    کشتۂ شمشیر حیرت اک جہاں ہو جائے گا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY