اپنی ناکام تمناؤں کا ماتم نہ کرو

عبدالعزیز فطرت

اپنی ناکام تمناؤں کا ماتم نہ کرو

عبدالعزیز فطرت

MORE BYعبدالعزیز فطرت

    اپنی ناکام تمناؤں کا ماتم نہ کرو

    تھم گیا دور مئے ناب تو کچھ غم نہ کرو

    اور بھی کتنے طریقے ہیں بیان غم کے

    مسکراتی ہوئی آنکھوں کو تو پر نم نہ کرو

    ہاں یہ شمشیر حوادث ہو تو کچھ بات بھی ہے

    گردنیں طوق غلامی کے لیے خم نہ کرو

    تم تو ہو رند تمہیں محفل جم سے کیا کام

    بزم جم ہو گئی برہم تو کوئی غم نہ کرو

    بادۂ کہنہ ڈھلے ساغر نو میں فطرتؔ

    ذوق فریاد کو آزردۂ ماتم نہ کرو

    مآخذ:

    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 606)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY