Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

اپنی قسمت کی لکیروں کو اشارہ نہ ملا

مکیش اندوری

اپنی قسمت کی لکیروں کو اشارہ نہ ملا

مکیش اندوری

MORE BYمکیش اندوری

    اپنی قسمت کی لکیروں کو اشارہ نہ ملا

    کوئی جگنو کوئی موتی کوئی تارا نہ ملا

    جن کا بچپن مری بانہوں میں ہی گزرا تھا کبھی

    اس بڑھاپے میں مجھے ان کا سہارا نہ ملا

    غم کے مارے تو ہزاروں ہی زمانے میں ملے

    میرے جیسا کوئی تقدیر کا مارا نہ ملا

    گھوم آئے ہیں جہاں سارا مگر آج تلک

    آپ کے جیسا ہنسی کوئی دوبارہ نہ ملا

    اپنی پلکوں کو بچھایا تری راہوں میں مگر

    تیری آمد کا کوئی دل کو اشارا نہ ملا

    مجھ کو دنیا نے تو نفرت کے سوا کچھ نہ دیا

    مر ہی جاؤں گا اگر پیار تمہارا نہ ملا

    جو سفینے کو کنارے سے لگا دیتا مرے

    ہائے قسمت مجھے ایسا کوئی دھارا نہ ملا

    ہے غموں کا وہ بھنور جس میں پھنسا ہوں اے مکیشؔ

    زندگی کو مری خوشیوں کا کنارا نہ ملا

    مأخذ :
    • کتاب : Scan File Mail By Salim Saleem

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے