اپنی تدبیر نہ تقدیر پہ رونا آیا

نوشاد علی

اپنی تدبیر نہ تقدیر پہ رونا آیا

نوشاد علی

MORE BYنوشاد علی

    اپنی تدبیر نہ تقدیر پہ رونا آیا

    دیکھ کر چپ تری تصویر پہ رونا آیا

    کیا حسیں خواب محبت نے دکھائے تھے ہمیں

    جب کھلی آنکھ تو تعبیر پہ رونا آیا

    اشک بھر آئے جو دنیا نے ستم دل پہ کئے

    اپنی لٹتی ہوئی جاگیر پہ رونا آیا

    خون دل سے جو لکھا تھا وہ مٹا اشکوں سے

    اپنے ہی نامے کی تحریر پہ رونا آیا

    جب تلک قید تھے تقدیر پہ ہم روتے تھے

    آج ٹوٹی ہوئی زنجیر پہ رونا آیا

    راہ ہستی پہ چلا موت کی منزل پہ ملا

    ہم کو اس راہ کے رہ گیر پہ رونا آیا

    جو نشانے پہ لگا اور نہ پلٹ کر آیا

    ہم کو نوشادؔ اسی تیر پہ رونا آیا

    مأخذ :
    • کتاب : Aathwan Sur (Pg. 94)
    • Author : Naushad Ali
    • مطبع : Naushad Academi Of Hindustani Sangeet (2006)
    • اشاعت : 2006

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY