اثر نہ کم ہو کبھی نالۂ رسا تیرا

بیتاب عظیم آبادی

اثر نہ کم ہو کبھی نالۂ رسا تیرا

بیتاب عظیم آبادی

MORE BYبیتاب عظیم آبادی

    اثر نہ کم ہو کبھی نالۂ رسا تیرا

    رہے بڑھا ہوا ہر آن حوصلہ تیرا

    پڑھی ہے عارض و کاکل کی داستاں میں نے

    سنا ہے میں نے فسانہ ذرا ذرا تیرا

    اے اشک شوق تجھی سے ہے زندگی دل کی

    فزوں ہے چشمۂ حیواں سے مرتبہ تیرا

    تمام راہ ہے فیض قدم سے نورانی

    ہے ماہتاب زمیں پر کہ نقش پا تیرا

    قدم کو تیز کر اس سے زیادہ اے بیتابؔ

    نکل گیا ہے بہت دور قافلہ تیرا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY