اشک دامن میں بھرے خواب کمر پر رکھا

احمد مشتاق

اشک دامن میں بھرے خواب کمر پر رکھا

احمد مشتاق

MORE BYاحمد مشتاق

    اشک دامن میں بھرے خواب کمر پر رکھا

    پھر قدم ہم نے تری راہ گزر پر رکھا

    ہم نے اک ہاتھ سے تھاما شب غم کا آنچل

    اور اک ہاتھ کو دامان سحر پر رکھا

    چلتے چلتے جو تھکے پاؤں تو ہم بیٹھ گئے

    نیند گٹھری پہ دھری خواب شجر پر رکھا

    جانے کس دم نکل آئے ترے رخسار کی دھوپ

    مدتوں دھیان ترے سایۂ در پر رکھا

    جاتے موسم نے پلٹ کر بھی نہ دیکھا مشتاقؔ

    رہ گیا ساغر گل سبزۂ تر پر رکھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اشک دامن میں بھرے خواب کمر پر رکھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY