اور انت میں جدائی بڑی کرب‌ ناک ہے

ناصر شہزاد

اور انت میں جدائی بڑی کرب‌ ناک ہے

ناصر شہزاد

MORE BY ناصر شہزاد

    اور انت میں جدائی بڑی کرب‌ ناک ہے

    تجھ مجھ میں یوں تو روز ازل سے وفاق ہے

    نیچے کہیں بدن میں مٹی خواہشوں کے خواب

    اوپر درازیٔ غم دوراں کی خاک ہے

    سکھیاں سجیلی بھور نین درپنا کی اور

    آنند پور پور عجب انہماک ہے

    قلعوں کے یہ حصار نہیں قربتوں کے دیار

    ان برجیوں کے پار ہوائے فراق ہے

    نیارے پیا کے روپ کہیں گن کہیں سروپ

    متھرا کا بادشاہ کہیں بھینسوں کا چاک ہے

    یہ راجدھانیاں یہاں بے بس کہانیاں

    کنگن میں ہاتھ ہے کہیں نتھلی میں ناک ہے

    میٹھا مٹھاس سے ہے وہ اجلا کپاس سے

    باتوں میں اشتراک ملن میں تپاک ہے

    مٹی کی سب سفارتیں بندھن بشارتیں

    سبزہ ندی کناروں مزاروں پہ آک ہے

    حق گوئی ہم رکاب دریدہ بدن کے باب

    کربل کتاب صدق سیاق و سباق ہے

    مآخذ:

    • Book : Ban Baas (Pg. 181)
    • Author : Naasir Shahzaad
    • مطبع : Alhamd Publications (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY