اور کچھ یاد نہیں اب سے نہ تب سے پوچھو

انجم عرفانی

اور کچھ یاد نہیں اب سے نہ تب سے پوچھو

انجم عرفانی

MORE BYانجم عرفانی

    اور کچھ یاد نہیں اب سے نہ تب سے پوچھو

    میری آنکھوں سے لہو بہتا ہے کب سے پوچھو

    لمحہ لمحہ میں ہوا جاتا ہوں ریزہ ریزہ

    وجہ کچھ مجھ سے نہ پوچھو مرے رب سے پوچھو

    وہ تو سورج ہے ہر اک بات کا شعلہ ہے جواب

    روبرو آ کے کہو یا کہ عقب سے پوچھو

    یاد ہے قصۂ غم کا مجھے ہر لفظ ابھی

    حال جس درد کا جس رنج کا جب سے پوچھو

    طے ہوا کیسے اندھیروں کے سمندر کا سفر

    غازۂ صبح سے کیا چادر شب سے پوچھو

    زخم دیکھو مرے تلووں کے نہ چہرے کا غبار

    مجھ پہ کیا گزری ہے یہ راہ طلب سے پوچھو

    کتنے صحرا کہ سمٹ آئے ہیں سینے میں مرے

    تشنگی میری نہ سوکھے ہوئے لب سے پوچھو

    یوں نہ ہر چہرے پہ اب ڈالو سوالی نظریں

    اس کے کوچے کا پتہ تم تو نہ سب سے پوچھو

    مجھ سے کیا پوچھتے ہو سارے ہی لمحوں کا حساب

    مل کے جس موڑ سے ہم بچھڑے ہیں تب سے پوچھو

    حرف حق کہنے میں کیا کیا نہ ہوئے ہم پہ ستم

    پوچھنا ہی ہے تو بوجہل و لہب سے پوچھو

    جنبش لب کی تمہیں بھی ہے اجازت انجمؔ

    بات جو پوچھو بہرحال ادب سے پوچھو

    مأخذ :
    • کتاب : libaas-e-zakhm (Pg. 27)
    • Author : anjum irfaanii
    • مطبع : daanish mahel aminuddulaa park lucknow (1984)
    • اشاعت : 1984

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY