عذاب ہجر سے انجان تھوڑی ہوتا ہے

ناہید ورک

عذاب ہجر سے انجان تھوڑی ہوتا ہے

ناہید ورک

MORE BYناہید ورک

    عذاب ہجر سے انجان تھوڑی ہوتا ہے

    یہ دل اب اتنا بھی نادان تھوڑی ہوتا ہے

    یہ زندگی ہے بہت کچھ یہاں پہ ممکن ہے

    کہ کچھ نہ ہونے کا امکان تھوڑی ہوتا ہے

    یہ دل کے زخم چھپا کر جو مسکراتے ہیں

    تو میرے دوست یہ آسان تھوڑی ہوتا ہے

    کبھی کبھار تو بدعت بھی ہو ہی جاتی ہے

    ہر ایک لمحہ ترا دھیان تھوڑی ہوتا ہے

    وہ جس کے پاس محبت بھی ہو، وفا بھی ہو

    بھلا وہ بے سر و سامان تھوڑی ہوتا ہے

    تری وفا میں کمی کچھ تو آئی ہے کہ یہ دل

    بلا جواز پریشان تھوڑی ہوتا ہے

    ادھر ادھر سے دلیلیں اٹھانی پڑ جائیں

    جو اتنا کچا ہو، ایمان تھوڑی ہوتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY