عذاب وحشت جاں کا صلہ نہ مانگے کوئی

افتخار عارف

عذاب وحشت جاں کا صلہ نہ مانگے کوئی

افتخار عارف

MORE BY افتخار عارف

    عذاب وحشت جاں کا صلہ نہ مانگے کوئی

    نئے سفر کے لیے راستہ نہ مانگے کوئی

    بلند ہاتھوں میں زنجیر ڈال دیتے ہیں

    عجیب رسم چلی ہے دعا نہ مانگے کوئی

    تمام شہر مکرم بس ایک مجرم میں

    سو میرے بعد مرا خوں بہا نہ مانگے کوئی

    کوئی تو شہر تذبذب کے ساکنوں سے کہے

    نہ ہو یقین تو پھر معجزہ نہ مانگے کوئی

    عذاب گرد خزاں بھی نہ ہو بہار بھی آئے

    اس احتیاط سے اجر وفا نہ مانگے کوئی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    افتخار عارف

    افتخار عارف

    نعمان شوق

    عذاب وحشت جاں کا صلہ نہ مانگے کوئی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY