ازل سے بادۂ ہستی کی ارزانی نہیں جاتی

جگدیش سہائے سکسینہ

ازل سے بادۂ ہستی کی ارزانی نہیں جاتی

جگدیش سہائے سکسینہ

MORE BYجگدیش سہائے سکسینہ

    ازل سے بادۂ ہستی کی ارزانی نہیں جاتی

    اس ارزانی پہ بھی اس کی فراوانی نہیں جاتی

    ہجوم رنج و غم نے اس قدر مجھ کو رلایا ہے

    کہ اب راحت کی صورت مجھ سے پہچانی نہیں جاتی

    ہوئی تھی اک خطا سرزد سو اس کو مدتیں گزریں

    مگر اب تک مرے دل سے پشیمانی نہیں جاتی

    چمن زار تمنا کا فقط اک پھول مرجھایا

    اسی دن سے مرے گلشن کی ویرانی نہیں جاتی

    مرے اشکوں سے کیا نسبت تمہیں اے انجم گردوں

    کہ ان کی روز روشن میں بھی تابانی نہیں جاتی

    مری وحشت میں شاید آ چلے انداز رعنائی

    کہ زلفوں کی طرح دل کی پریشانی نہیں جاتی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY