بہ ہر طریق اسے مسمار کرتے رہنا ہے

ارشد عبد الحمید

بہ ہر طریق اسے مسمار کرتے رہنا ہے

ارشد عبد الحمید

MORE BY ارشد عبد الحمید

    بہ ہر طریق اسے مسمار کرتے رہنا ہے

    کبھی سخن تو کبھی وار کرتے رہنا ہے

    دروں کے واسطے دیوار چاہیے جاناں

    سو فرش خواب کو دیوار کرتے رہنا ہے

    سحر کے معرکۂ نیک و بد سے کیا مطلب

    ہمارا کام تو بیدار کرتے رہنا ہے

    وہ ایک درد جو صیقل نہیں ہوا اب تک

    اسی کو آئنۂ یار کرتے رہنا ہے

    یہی ہے ورثۂ شبیر کا چلن ارشدؔ

    کہ ہر یزید سے انکار کرتے رہنا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Sadaa-e-aabju (Pg. 75)
    • Author : Arshad Abdul Hameed
    • مطبع : Arshad Abdul Hameed (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY