بقدر پیمانۂ تخیل سرور ہر دل میں ہے خودی کا

جمیلؔ مظہری

بقدر پیمانۂ تخیل سرور ہر دل میں ہے خودی کا

جمیلؔ مظہری

MORE BYجمیلؔ مظہری

    بقدر پیمانۂ تخیل سرور ہر دل میں ہے خودی کا

    اگر نہ ہو یہ فریب پیہم تو دم نکل جائے آدمی کا

    بس ایک احساس نارسائی نہ جوش اس میں نہ ہوش اس کو

    جنوں پہ حالت ربودگی کی خرد پہ عالم غنودگی کا

    ہے روح تاریکیوں میں حیراں بجھا ہوا ہے چراغ منزل

    کہیں سر راہ یہ مسافر پٹک نہ دے بوجھ زندگی کا

    خدا کی رحمت پہ بھول بیٹھوں یہی نہ معنی ہے اس کے واعظ

    وہ ابر کا منتظر کھڑا ہو مکان جلتا ہو جب کسی کا

    وہ لاکھ جھکوا لے سر کو میرے مگر یہ دل اب نہیں جھکے گا

    کہ کبریائی سے بھی زیادہ مزاج نازک ہے بندگی کا

    جمیلؔ حیرت میں ہے زمانہ مرے تغزل کی مفلسی پر

    نہ جذبۂ اجتبائے رضوی نہ کیف پرویزؔ شاہدی کا

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY