بطرز دلبری بیداد کیجے

مرزا آسمان جاہ انجم

بطرز دلبری بیداد کیجے

مرزا آسمان جاہ انجم

MORE BYمرزا آسمان جاہ انجم

    بطرز دلبری بیداد کیجے

    جفاؤں میں ادا ایجاد کیجے

    ہماری عاجزی اعجاز ہو جائے

    پیمبر ہوں اگر آزاد کیجے

    یہ کیسا عالم بالا کا جھگڑا

    اجی پہلو مرا آباد کیجے

    لہو مل کر شہیدوں میں ملے ہیں

    ہمارے نام پر بھی صاد کیجے

    تمنا بڑھ نہ جائے حد سے زائد

    ہمیں شاہ نجف اب یاد کیجے

    ہماری خاک سے صحرا بھرے ہیں

    جہاں تک چاہئے برباد کیجے

    اشاروں نے تو لے لی جان صاحب

    ذرا منہ سے بھی کچھ ارشاد کیجے

    پریشان ہے بہت انجمؔ خدارا

    شہید کربلا امداد کیجے

    مزاج یار ہو جائے نہ برہم

    نہ اے انجمؔ بہت فریاد کیجے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY