باقی جہاں میں قیس نہ فرہاد رہ گیا

داغؔ دہلوی

باقی جہاں میں قیس نہ فرہاد رہ گیا

داغؔ دہلوی

MORE BY داغؔ دہلوی

    باقی جہاں میں قیس نہ فرہاد رہ گیا

    افسانہ عاشقوں کا فقط یاد رہ گیا

    یہ سخت جاں تو قتل سے ناشاد رہ گیا

    خنجر چلا تو بازوئے جلاد رہ گیا

    پابندیوں نے عشق کی بیکس رکھا مجھے

    میں سو اسیریوں میں بھی آزاد رہ گیا

    چشم صنم نے یوں تو بگاڑے ہزار گھر

    اک کعبہ چند روز کو آباد رہ گیا

    محشر میں جائے شکوہ کیا شکر یار کا

    جو بھولنا تھا مجھ کو وہی یاد رہ گیا

    ان کی تو بن پڑی کہ لگی جان مفت ہاتھ

    تیری گرہ میں کیا دل ناشاد رہ گیا

    پر نور ہو رہے گا یہ ظلمت کدہ اگر

    دل میں بتوں کا شوق خداداد رہ گیا

    یوں آنکھ ان کی کر کے اشارہ پلٹ گئی

    گویا کہ لب سے ہو کے کچھ ارشاد رہ گیا

    ناصح کا جی چلا تھا ہماری طرح مگر

    الفت کی دیکھ دیکھ کے افتاد رہ گیا

    ہیں تیرے دل میں سب کے ٹھکانے برے بھلے

    میں خانماں خراب ہی برباد رہ گیا

    وہ دن گئے کہ تھی مرے سینے میں کچھ خراش

    اب دل کہاں ہے دل کا نشاں یاد رہ گیا

    صورت کو تیری دیکھ کے کھنچتی ہے جان خلق

    دل اپنا تھام تھام کے بہزاد رہ گیا

    اے داغؔ دل ہی دل میں گھلے ضبط عشق سے

    افسوس شوق نالہ و فریاد رہ گیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    باقی جہاں میں قیس نہ فرہاد رہ گیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY