بد گمانی کو بڑھا کر تم نے یہ کیا کر دیا

نذیر بنارسی

بد گمانی کو بڑھا کر تم نے یہ کیا کر دیا

نذیر بنارسی

MORE BYنذیر بنارسی

    بد گمانی کو بڑھا کر تم نے یہ کیا کر دیا

    خود بھی تنہا ہو گئے مجھ کو بھی تنہا کر دیا

    زندہ رکھنے کے لیے رکھا ہے اچھا سلسلہ

    اک مٹایا دوسرا ارمان پیدا کر دیا

    آپ سمجھانے بھی آئے قبلہ و کعبہ تو کب

    عشق نے جب بے نیاز دین و دنیا کر دیا

    بندگان دور حاضر کی خدائی دیکھیے

    جس جگہ جس وقت چاہا حشر برپا کر دیا

    کل کی کل ہے کل جب آئے گا تو سمجھا جائے گا

    آج تو ساقی نے دل کا بوجھ ہلکا کر دیا

    محترم پی لیجئے موسم نے موقع دے دیا

    دیکھیے کالی گھٹا نے اٹھ کے پردا کر دیا

    وہ گھر آئے تھے نذیرؔ ایسے میں کچھ کہنا نہ تھا

    شکر کا موقع تھا پیارے تو نے شکوا کر دیا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Nazeer Banarasi (Pg. 291)
    • Author : Nazeer Banarsi
    • مطبع : Educational Publishing House (2014)
    • اشاعت : 2014

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY