بدل گئی ہے فضا نیلے آسمانوں کی

عرفان صدیقی

بدل گئی ہے فضا نیلے آسمانوں کی

عرفان صدیقی

MORE BY عرفان صدیقی

    بدل گئی ہے فضا نیلے آسمانوں کی

    بہت دنوں میں کھلیں کھڑکیاں مکانوں کی

    بس ایک بار جو لنگر اٹھے تو پھر کیا تھا

    ہوائیں تاک میں تھیں جیسے بادبانوں کی

    کوئی پہاڑ رکا ہے کبھی زمیں کے بغیر

    ہر ایک بوجھ پنہ چاہتا ہے شانوں کی

    تو غالباً وہ ہدف ہی حدوں سے باہر تھا

    یہ کیسے ٹوٹ گئیں ڈوریاں کمانوں کی

    جو ہے وہ کل کے سوالوں کے انتظار میں ہے

    یہ زندگی ہے کہ ہے رات امتحانوں کی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY