بدن پہ گھاس ہری قرب کی اگاتا ہے

عارج میر

بدن پہ گھاس ہری قرب کی اگاتا ہے

عارج میر

MORE BYعارج میر

    بدن پہ گھاس ہری قرب کی اگاتا ہے

    یہ نیل روز نئے سامری بلاتا ہے

    ہماری پیاس بھی ہے بھید کھولنے والی

    وہ پانیوں کو سیہ ریت میں چھپاتا ہے

    ہرن کی آنکھ میں پھیلا ہرا بھرا جنگل

    دمکتی دھوپ پہ کلکاریاں لگاتا ہے

    سکوں کی اور جھپٹتی ہیں بوڑھی چیلیں پھر

    نکیلی کرچیاں ہر راستہ اگاتا ہے

    گرفتیں خشک ہوئیں اور پھسلنیں شاداب

    شکستہ صورتیں ہر آئینہ دکھاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY