بدن پہ پیرہن خاک کے سوا کیا ہے

حمایت علی شاعر

بدن پہ پیرہن خاک کے سوا کیا ہے

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    بدن پہ پیرہن خاک کے سوا کیا ہے

    مرے الاؤ میں اب راکھ کے سوا کیا ہے

    یہ شہر سجدہ گزاراں دیار کم نظراں

    یتیم خانۂ ادراک کے سوا کیا ہے

    تمام گنبد و مینار و منبر و محراب

    فقیہ شہر کی املاک کے سوا کیا ہے

    کھلے سروں کا مقدر بہ فیض جہل خرد

    فریب سایۂ افلاک کے سوا کیا ہے

    تمام عمر کا حاصل بہ فضل رب کریم

    متاع دیدۂ نمناک کے سوا کیا ہے

    یہ میرا دعویٰ خود بینی و جہاں بینی

    مری جہالت سفاک کے سوا کیا ہے

    جہان فکر و عمل میں یہ میرا زعم وجود

    فقط نمائش پوشاک کے سوا کیا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    حمایت علی شاعر

    حمایت علی شاعر

    حمایت علی شاعر

    حمایت علی شاعر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بدن پہ پیرہن خاک کے سوا کیا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY