بڑے خلوص سے دامن پسارتا ہے کوئی

شاذ تمکنت

بڑے خلوص سے دامن پسارتا ہے کوئی

شاذ تمکنت

MORE BY شاذ تمکنت

    بڑے خلوص سے دامن پسارتا ہے کوئی

    خدا کو جیسے زمیں پر اتارتا ہے کوئی

    نہ پوچھ کیا ترے ملنے کی آس ہوتی ہے

    کہاں گزرتی ہے کیسے گزارتا ہے کوئی

    بجا ہے شرط وفا شرط زندگی بھی تو ہو

    بچا سکے تو بچا لے کہ ہارتا ہے کوئی

    وہ کون شخص ہے کیا نام ہے خدا جانے

    اندھیری رات ہے کس کو پکارتا ہے کوئی

    تمام عشق کی جاگیر ہو گئی دنیا

    تری نگاہ پہ دنیا کو وارتا ہے کوئی

    چراغ رکھ کے سر شام دل کے زینے پر

    مجھے خبر نہیں ہوتی سدھارتا ہے کوئی

    یہ سر کا بوجھ نہیں دل کا بوجھ ہے اے شاذؔ

    کہاں اترتا ہے لیکن اتارتا ہے کوئی

    مآخذ:

    • Book: Kulliyat-e-Shaz Tamkanat (Pg. 298)
    • Author: Shaz Tamkanat
    • مطبع: Educational Publishing House (2004)
    • اشاعت: 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites