بڑھ گئی مے پینے سے دل کی تمنا اور بھی

منشی امیر اللہ تسلیم

بڑھ گئی مے پینے سے دل کی تمنا اور بھی

منشی امیر اللہ تسلیم

MORE BY منشی امیر اللہ تسلیم

    بڑھ گئی مے پینے سے دل کی تمنا اور بھی

    صدقہ اپنا ساقیا یک جام صہبا اور بھی

    ایک تو میں آپ ناصح ہوں پریشاں خستہ جاں

    دل دکھا دیتی ہے تیری پند بے جا اور بھی

    داستان شوق دل ایسی نہیں تھی مختصر

    جی لگا کر تم اگر سنتے میں کہتا اور بھی

    کچھ تو پہلے سے دل بے تاب تھا وحشی مزاج

    بے ترے دن رات گھبراتا ہے تنہا اور بھی

    دیکھتے ہی دیکھتے تسلیمؔ وہ چھپنے لگے

    بڑھ گیا بے پردگی میں مجھ سے پردہ اور بھی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بڑھ گئی مے پینے سے دل کی تمنا اور بھی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY