بڑھ گیا بادۂ گلگوں کا مزا آخر شب

مخدومؔ محی الدین

بڑھ گیا بادۂ گلگوں کا مزا آخر شب

مخدومؔ محی الدین

MORE BY مخدومؔ محی الدین

    بڑھ گیا بادۂ گلگوں کا مزا آخر شب

    اور بھی سرخ ہے رخسار حیا آخر شب

    منزلیں عشق کی آساں ہوئیں چلتے چلتے

    اور چمکا ترا نقش کف پا آخر شب

    کھٹکھٹا جاتا ہے زنجیر در مے خانہ

    کوئی دیوانہ کوئی آبلہ پا آخر شب

    سانس رکتی ہے چھلکتے ہوئے پیمانے میں

    کوئی لیتا تھا ترا نام وفا آخر شب

    گل ہے قندیل حرم گل ہیں کلیسا کے چراغ

    سوئے پیمانہ بڑھے دست دعا آخر شب

    ہائے کس دھوم سے نکلا ہے شہیدوں کا جلوس

    جرم چپ سر بہ گریباں ہے جفا آخر شب

    اسی انداز سے پھر صبح کا آنچل ڈھلکے

    اسی انداز سے چل باد صبا آخر شب

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مخدومؔ محی الدین

    مخدومؔ محی الدین

    مآخذ:

    • Book: Kulliyat-e-Makhdum Muhi-ud-din (Pg. 193)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites