بڑھ رہا ہوں خیال سے آگے

طاہر عظیم

بڑھ رہا ہوں خیال سے آگے

طاہر عظیم

MORE BYطاہر عظیم

    بڑھ رہا ہوں خیال سے آگے

    کچھ نہیں ماہ و سال سے آگے

    بس حقیقت ہے جو نظر آیا

    ہے فسانہ جمال سے آگے

    میں ترے ہجر میں جو زندہ ہوں

    سوچتا ہوں وصال سے آگے

    اس قدر با کمال ہیں یہ لوگ

    کچھ کریں گے کمال سے آگے

    شوق صدمے سے ہو گیا دو چار

    بڑھ نہ پایا دھمال سے آگے

    یہ جو ماضی کی بات کرتے ہیں

    سوچتے ہوں گے حال سے آگے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY