بہار آئی مگر خیالی

عارف اعظمی

بہار آئی مگر خیالی

عارف اعظمی

MORE BYعارف اعظمی

    بہار آئی مگر خیالی

    صبا نے پھولوں پہ خاک ڈالی

    میں کس کو اپنا حریف سمجھوں

    کہ سب کی صورت ہے بھولی بھالی

    حقیقتوں پہ نگاہ رکھو

    نہیں ہے سب کچھ یہاں خیالی

    کلی نے شاید کہ پٹ ہیں کھولے

    اثر چمن میں ہے ڈالی ڈالی

    نہ برق سوزاں نہ باد‌ صر‌صر

    گلوں کا قاتل چمن کا والی

    وہی ہے سب سے عظیم فاتح

    وہ آج جس نے حیا بچا لی

    کوئی نہ ہوگا حریف عارفؔ

    جو اس نے تیغ و سپر سنبھالی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY