بہار کا روپ بھی نگاہوں میں اک فریب بہار سا ہے

نہال سیوہاروی

بہار کا روپ بھی نگاہوں میں اک فریب بہار سا ہے

نہال سیوہاروی

MORE BYنہال سیوہاروی

    بہار کا روپ بھی نگاہوں میں اک فریب بہار سا ہے

    حیات میں دل کشی نہیں ہے حیات میں انتشار سا ہے

    زمانہ کیا دیکھیے دکھائے نہ جانے کیا انقلاب آئے

    فلک کے تیور میں خشمگیں سے زمیں کے دل میں غبار سا ہے

    کمال دیوانگی تو جب ہے رہے نہ احساس جیب و دامن

    اگر ہے احساس جیب و دامن تو پھر جنوں ہوشیار سا ہے

    کچھ آج ایسی ہی جی پہ گزری دبی ہوئی تھی جو چوٹ ابھری

    جسے سنبھالے ہوا تھا دل میں وہ نالہ بے اختیار سا ہے

    ابھی امید و وفا نہ توڑو سیاست دلبری نہ چھوڑو

    کبھی جو فردوس رنگ و بو تھا وہ ایک اجڑا دیار سا ہے

    نہالؔ کو بے پئے ہے مستی ہے مفت الزام مے پرستی

    ہے عام اس شہر میں روایت یہ شخص کچھ بادہ خوار سا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Nuquush Lahore (Pg. 225)
    • Author : Mohd Tufail
    • مطبع : Idara Farog-e-urdu, Lahore (Feb.1956 )
    • اشاعت : Feb.1956

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے