بہار کون سی تجھ میں جمال یار نہ تھی

زیب غوری

بہار کون سی تجھ میں جمال یار نہ تھی

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    بہار کون سی تجھ میں جمال یار نہ تھی

    مشاہدہ تھا ترا سیر لالہ زار نہ تھی

    مہکتی زلفوں سے خوشے گلوں کے چھوٹ گرے

    کچھ اور جیسے کہ گنجائش بہار نہ تھی

    ہم اپنے دل ہی کو روتے تھے لیکن اس کے لیے

    جہاں میں کون سی شے تھی جو بے قرار نہ تھی

    تلاش ایک بہانہ تھا خاک اڑانے کا

    پتہ چلا کہ ہمیں جستجوئے یار نہ تھی

    جھکا ہے قدموں میں تیرے وہ سر کہ جس کے لیے

    کوئی جگہ بھی مناسب سوائے دار نہ تھی

    نہ جانے زیبؔ دل زار کیوں تڑپ اٹھا

    ہوائے صبح تھی خوشبوئے زلف یار نہ تھی

    مأخذ :
    • کتاب : zartaab (Pg. 258)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY