Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بہت دھوکا کیا خود کو مگر کیا کر لیا میں نے

فاروق شفق

بہت دھوکا کیا خود کو مگر کیا کر لیا میں نے

فاروق شفق

MORE BYفاروق شفق

    دلچسپ معلومات

    شمارہ 144 دسمبر 1986 ء جنوری 1987

    بہت دھوکا کیا خود کو مگر کیا کر لیا میں نے

    تماشا مجھ کو کرنا تھا تماشا کر لیا میں نے

    یہاں بھی اب نئی آبادیوں کا شور سنتا ہوں

    یہاں سے بھی نکلنے کا ارادہ کر لیا میں نے

    سفر میں دھوپ کی شدت کہاں تک جھیلتا آخر

    تری یادوں کو اوڑھا اور سایہ کر لیا میں نے

    کوئی اچھا نہیں سب لوگ اک جیسے ہیں بستی میں

    نتیجہ یہ ہوا خود کو اکیلا کر لیا میں نے

    کوئی موسم ہو کیسی ہی فضا ہو غم نہیں ہوتا

    زمانے والا ہر اک رنگ پیدا کر لیا میں نے

    یہ دنیا اپنے ڈھب کی تھی نہ دنیا والے اچھے تھے

    مگر کیا کیجیئے پھر بھی گزارہ کر لیا میں نے

    مأخذ :
    • کتاب : Shabkhoon (Urdu Monthly) (Pg. 1480)
    • Author : Shamsur Rahman Faruqi
    • مطبع : Shabkhoon Po. Box No.13, 313 rani Mandi Allahabad (June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II)
    • اشاعت : June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے