بہت کچھ منتظر اک بات کا تھا

راجیندر منچندا بانی

بہت کچھ منتظر اک بات کا تھا

راجیندر منچندا بانی

MORE BYراجیندر منچندا بانی

    بہت کچھ منتظر اک بات کا تھا

    کہ لمحہ لاکھ امکانات کا تھا

    بچا لی تھی ضیا اندر کی اس نے

    وہی اک آشنا اب رات کا تھا

    رفاقت کیا کہاں کے مشترک خواب

    کہ سارا سلسلہ شبہات کا تھا

    بگولے اس کے سر پر چیختے تھے

    مگر وہ آدمی چپ ذات کا تھا

    حنائی ہاتھ کا منظر تھا بانیؔ

    کہ تابندہ ورق اثبات کا تھا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-bani (Pg. 178)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے