بہت مضبوط لوگوں کو بھی غربت توڑ دیتی ہے

جاوید نسیمی

بہت مضبوط لوگوں کو بھی غربت توڑ دیتی ہے

جاوید نسیمی

MORE BYجاوید نسیمی

    بہت مضبوط لوگوں کو بھی غربت توڑ دیتی ہے

    انا کے سب حصاروں کو ضرورت توڑ دیتی ہے

    جھکایا جا نہیں سکتا جنہیں جبر و عداوت سے

    انہیں بھی اک اشارے میں محبت توڑ دیتی ہے

    کسی کے سامنے جب ہاتھ پھیلاتی ہے مجبوری

    تو اس مجبور کو اندر سے غیرت توڑ دیتی ہے

    ترس کھاتے ہیں جب اپنے سسک اٹھتی ہے خودداری

    ہر اک خوددار انساں کو عنایت توڑ دیتی ہے

    سمندر پار جا کر جو بہت خوش حال دکھتے ہیں

    یہ ان کے دل سے پوچھو کیسے ہجرت توڑ دیتی ہے

    نبھانا دل کے رشتوں کو نہیں ہے کھیل بچوں کا

    کہ ان شیشوں کو اک ہلکی سی غفلت توڑ دیتی ہے

    مآخذ
    • کتاب : Khwab Aasmano ke (Pg. 59)
    • Author : Javed Nasimi
    • مطبع : Educational Publishing House (2014)
    • اشاعت : 2014

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY