بہت سا کام تو پہلے ہی کر لیا میں نے

فیضان ہاشمی

بہت سا کام تو پہلے ہی کر لیا میں نے

فیضان ہاشمی

MORE BYفیضان ہاشمی

    بہت سا کام تو پہلے ہی کر لیا میں نے

    جہاں جہاں مجھے ڈرنا تھا ڈر لیا میں نے

    خلا میں گروی رکھا اپنے سارے خوابوں کو

    اور اس زمین پہ چھوٹا سا گھر لیا میں نے

    بہت شدید توجہ کا سامنا تھا مجھے

    سو اک گلاس کو پانی سے بھر لیا میں نے

    خدا جہاز کے اندر سے رزق پھینکتا تھا

    خدا کا شکر ہے کچھ کیچ کر لیا میں نے

    ہوا میں ہاتھ گھمایا غزل نہیں آئی

    اچک کے پھول ہی کاغذ پہ دھر لیا میں نے

    تمام دوست سمندر کے پار جانے لگے

    پر ایک دل کو تو ساحل پہ دھر لیا میں نے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    فیضان ہاشمی

    فیضان ہاشمی

    فیضان ہاشمی

    فیضان ہاشمی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY