بلا سے کوئی ہاتھ ملتا رہے

جوشؔ ملسیانی

بلا سے کوئی ہاتھ ملتا رہے

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    بلا سے کوئی ہاتھ ملتا رہے

    ترا حسن سانچے میں ڈھلتا رہے

    ہر اک دل میں چمکے محبت کا داغ

    یہ سکہ زمانے میں چلتا رہے

    وہ ہمدرد کیا جس کی ہر بات میں

    شکایت کا پہلو نکلتا رہے

    بدل جائے خود بھی تو حیرت ہے کیا

    جو ہر روز وعدے بدلتا رہے

    مری بے قراری پے کہتے ہیں وہ

    نکلتا ہے دم تو نکلتا رہے

    مآخذ:

    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 115)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2013-14)
    • اشاعت : 2013-14

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY