بنا حسن تکلم حسن ظن آہستہ آہستہ

شاذ تمکنت

بنا حسن تکلم حسن ظن آہستہ آہستہ

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    بنا حسن تکلم حسن ظن آہستہ آہستہ

    بہر صورت کھلا اک کم سخن آہستہ آہستہ

    مسافر راہ میں ہے شام گہری ہوتی جاتی ہے

    سلگتا ہے تری یادوں کا بن آہستہ آہستہ

    دھواں دل سے اٹھے چہرے تک آئے نور ہو جائے

    بڑی مشکل سے آتا ہے یہ فن آہستہ آہستہ

    ابھی تو سنگ طفلاں کا ہدف بننا ہے کوچوں میں

    کہ راس آتا ہے یہ دیوانہ پن آہستہ آہستہ

    ابھی تو امتحان آبلہ پا ہے بیاباں میں

    بنیں گے کنج گل دشت و دمن آہستہ آہستہ

    ابھی کیوں کر کہوں زیر نقاب سرمگیں کیا ہے

    بدلتا ہے زمانے کا چلن آہستہ آہستہ

    میں اہل انجمن کی خلوت دل کا مغنی ہوں

    مجھے پہچان لے گی انجمن آہستہ آہستہ

    دل ہر سنگ گویا شمع محراب تمنا ہے

    اثر کرتی ہے ضرب کوہکن آہستہ آہستہ

    کسی کافر کی شوخی نے کہلوائی غزل مجھ سے

    کھلے گا شاذؔ اب رنگ سخن آہستہ آہستہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY