برس کے بھی نہ مرے کام آ سکی بارش

عبدالسلام عاصم

برس کے بھی نہ مرے کام آ سکی بارش

عبدالسلام عاصم

MORE BYعبدالسلام عاصم

    برس کے بھی نہ مرے کام آ سکی بارش

    ابھی وہ کھل ہی رہے تھے کہ دھل گئی بارش

    بجھا سکی نہ کسی طور میری روح کی پیاس

    بدن کی حد سے تجاوز نہ کر سکی بارش

    عجب نہیں کہ جگر تک اتر گئی ہوتی

    ہمارے ساتھ اگر خود بھی بھیگتی بارش

    ہے ذکر یار اسی التزام سے رنگیں

    مہکتا جسم جواں رات بے خودی بارش

    ہمیں فریب نظر کا شکار ہوتے رہے

    ہوا کے ساتھ بدلتی تھی سمت بھی بارش

    کبھی تو راز دلوں کے ٹٹولتی عاصمؔ

    کبھی تو جھانکتی آنکھوں میں سر پھری بارش

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY