برگ ٹھہرے نہ جب ثمر ٹھہرے

اقبال آصف

برگ ٹھہرے نہ جب ثمر ٹھہرے

اقبال آصف

MORE BYاقبال آصف

    برگ ٹھہرے نہ جب ثمر ٹھہرے

    ایسے موسم پہ کیا نظر ٹھہرے

    عہد کم مایہ کی نگاہوں میں

    کاغذی پھول معتبر ٹھہرے

    جن کو دعویٰ تھا بے کرانی کا

    وہ سمندر بھی بوند بھر ٹھہرے

    وہ گیا بھی تو اس کی یادوں کے

    کتنے مہمان میرے گھر ٹھہرے

    کوئی اپنے لئے بھی ٹھہرے گا

    ہم کسی کے لئے اگر ٹھہرے

    ہم کھرے تھے دمک اٹھے ورنہ

    کس میں ہمت کہ آگ پر ٹھہرے

    موت ہے جستجو مسافر کی

    ایک لمحہ جو بے خبر ٹھہرے

    پوچھ ان سے ہے سخت جانی کیا

    آندھیوں میں بھی جو شجر ٹھہرے

    خوش ہو دنیا کہ ہم تری خاطر

    بزم یاراں میں بے ہنر ٹھہرے

    جن سے آصفؔ ہمیں توقع تھی

    رابطے وہ بھی مختصر ٹھہرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے